چکن کھانے کے شوقین افرادکے لیے بری خبر،کون کونسی بیماریاں لاحق ہوسکتی ہیں ،رپورٹ میں تہلکہ خیزانکشافات

1 58

چکن کا گوشت کھانے سے کینسر ہوسکتا ہے۔ امریکی ادارے ایف ڈی اے کی نئی تحقیق میں سامنے آیا ہے کہ فارمی مرغی کا وزن بڑھانے اور بیماری سے بچانے کیلئے خوراک میں شامل اجزا کی وجہ سے پھیپھڑوں، جگر، گردوں، مثانے اور جلد کا کینسر ہوسکتا ہے۔طبی ماہرین نے کہا ہے کہ شہری فارمی مرغی کا گوشت استعمال کرنے میں احتیاط برتیں۔ امریکی
ادارے ایف ڈی اے نے طویل تحقیق کے بعد انکشاف کیا ہے کہ برائلر مرغی کی خوراک میں ایسے اجزا شامل ہیں جو کینسر لاحق ہونے کا باعث بنتے ہیں۔تحقیق کے مطابق برائلر مرغی کا وزن بڑھانے اور اسے بیماریوں سے بچانے کیلئے اس کی خوراک میں انسانی صحت کیلئے مہلک کیمیکل آرسینک موجود ہے۔ امریکی ادارے کی تحقیق کے مطابق چکن کے گوشت میں آرسینک کی موجودگی کے باعث مختلف اقسام کا کینسر لاحق ہونے کا خطرہ ہے۔معروف فزیشن پروفیسر ڈاکٹر فیصل مسعودنے کہا ہے کہ متعلقہ اداروں کو فوری طور پر برائلر مرغی کی فیڈ تیار کرنے والوں کو چیک کرنا چاہئے کہ اس میں آرسینک تو شامل نہیں۔پروفیسر ڈاکٹر فیصل مسعود نے خبردار کیا ہے کہ جب تک واضح نہیں ہوتا کہ ہمارے ہاں چکن کا گوشت محفوظ ہے تب تک شہری اس کے استعمال میں احتیاط برتیں۔امریکی ادارے کی تحقیق میں یہ بھی انکشاف ہوا ہے کہ برائلر مرغی کے گوشت کی گلابی مائل رنگت بھی آرسینک کی وجہ سے ہوتی ہے

1 تبصرہ
  1. blogs کہتے ہیں

    hen we got them in the mail, my friend downloaded a scanner on her phone, and
    all of them scanned,” Hart said.The national statistics on fake id new york use among college students are difficult
    to pinpoint, but one study conducted by the National Center for Biotechnology
    Information at an unnamed mid-Atlantic public university
    found that 66% of students sampled admitted
    to using a fake ID at least once. And while students may see this trend as
    an accepted norm, the proliferation of these realistic IDs have become a headache
    for bouncers, bartenders and business owners,
    too.Bruno’s Uptown Tavern, a popular college bar within walking distance of both Loyola and Tulane’s campus, draws a vibrant
    student crowd during the school year. The bar is 18-and-up to enter, but 21-and-up to drink, which means the bartenders and
    bouncers are all trained to spot fakes according to David Melius, owner of the tavern.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.