سندھ ہائی کورٹ نے حیدرآباد، کراچی میں چار ہفتوں میں بلدیاتی انتخابات کرانے کا حکم دے دیا۔

0

کراچی:

سندھ ہائی کورٹ (ایس ایچ سی) نے جمعہ کو حکم دیا کہ صوبے کے دو بڑے شہری علاقوں کراچی اور حیدرآباد میں چار ہفتوں میں بلدیاتی انتخابات کرائے جائیں۔

سندھ کے چیف جسٹس احمد علی شیخ کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے درخواستوں کی سماعت کی اور آج سندھ ہائی کورٹ نے جماعت اسلامی (جے آئی) اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی درخواستوں کے خلاف محفوظ کیا گیا فیصلہ پڑھ کر سنایا۔ سندھ کے دو شہروں میں انتخابات میں تاخیر پر۔

عدالت نے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کو انتخابی شیڈول جاری کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے سندھ حکومت کو انتخابات کے لیے سیکیورٹی اور دیگر سہولیات یقینی بنانے کا حکم دیا۔

پڑھنا کراچی کے ڈی سیز نے الیکشن کمیشن کو بلدیاتی انتخابات کے لیے تیار بتا دیا۔

واضح رہے کہ کراچی میں بلدیاتی انتخابات اکتوبر میں سندھ کی درخواست پر وزارت داخلہ کے اس خط پر غور کے بعد تیسری بار ملتوی کیے گئے تھے جس میں اس نے بلدیاتی انتخابات کے لیے سیکیورٹی اہلکار فراہم کرنے سے معذوری ظاہر کی تھی۔

سندھ کابینہ نے جمعہ کو کراچی میں بلدیاتی انتخابات 90 دن کے لیے ملتوی کرنے کی منظوری دی اور الیکشن کمیشن آف پاکستان کے صوبائی دفتر کو بھی ایک خط کے ذریعے فیصلے سے آگاہ کیا۔

کراچی کی بڑی اپوزیشن جماعتوں پی ٹی آئی اور جے آئی نے بلدیاتی انتخابات میں تاخیر پر سخت استثنیٰ لیا اور کہا کہ حکمران پیپلز پارٹی اور ایم کیو ایم پی انتخابات کے انعقاد سے خوفزدہ ہیں۔

چیف الیکشن کمشنر (سی ای سی) نے منگل کو کہا کہ الیکشن کمیشن کراچی میں جلد از جلد بلدیاتی انتخابات کرانا چاہتا ہے اور انتخابات کے انتظام کے لیے پنجاب سے عملہ تعینات کرنے کی تجویز دی ہے۔

مزید پڑھ ’پی پی پی اور ایم کیو ایم پی نے ایل جی انتخابات طے کر لیے‘

چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ نے بھی کہا تھا کہ صوبائی حکومت بلدیاتی انتخابات ملتوی کرنے کے لیے قوانین میں ترمیم نہیں کر سکتی اور یہ کہ "بلدیاتی انتخابات کی تاریخ کا اعلان کرنا ECP کی ذمہ داری ہے”۔

سی ای سی نے مزید کہا، "اگر سندھ پولیس کے اہلکار اسلام آباد میں سیکیورٹی فراہم کرنے کے لیے تعینات کیے جاتے ہیں،” سی ای سی نے جاری رکھا، "سندھ میں پنجاب پولیس کے اہلکاروں کو کیسے تعینات کیا جائے؟ سیکیورٹی کے لیے گارڈز یا دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں کو تعینات کیا جا سکتا ہے۔ ہم پنجاب حکومت سے سیکیورٹی کے لیے کہہ سکتے ہیں۔ "

واضح رہے کہ الیکشن کمیشن نے کراچی میں ہونے والے بلدیاتی انتخابات سے متعلق بھی فیصلہ محفوظ کرلیا ہے جس کا اعلان 22 نومبر کو کیا جائے گا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.